شیخ صاحب کی بیگم

کل دوپہر کو شیخ صاحب کی بیگم میکے گئیں، وہ اس وقت آفس میں تھے. جب گھر پہنچے تو یہ نوٹ ٹی وی پر چسپاں ملا.

.
.
.
.
امی کے گھر جا رہی ہوں بچوں کو لے کے. نیچے کی باتوں پر احتیاط سے عمل کرنا۔
۔۔
1 – دوستوں کو گھر بلا کر كباڑخانہ مت بنا دینا. پچھلی بار بھی چھت بہت گند ی ملی تھی ۔
2 – کھانا گھر میں بنا لینا یا ہوٹل سے کھا کر آ جانا، باہر سے لا لا کر ہر کسی کو گھر میں مت کھلانا، پچھلی بار صوفے کے نیچے چار پیزوں کا بل ملا تھا۔
3 – آئینہ ڈریسنگ ٹیبل کے پاس رکھنا. پچھلی بار فرج میں ملا تھا ۔
4 – کام والی کی تنخواہ دے چکی ہوں ۔
بلاوجہ احسان جتانے کی ضرورت نہیں ۔
5 – صبح صبح اٹھ کر پڑوسن کو جگا جگا کے اخبار آیا کے نہیں یہ کہنے کی ضرورت نہیں ہے،
ہمارا اخبار اور اخبار والا ان سے مختلف ہے …
اور دودھ والا اور دھوبی بھی ۔
6 – تمہارے بنیان الماری کے نیچے کے خانوں میں ہیں اور بچوں کی اوپر کے خانے میں رکھی ہوتی ہے. پچھلی بار کی طرح بچوں کی پہن کے مت چلے جانا …..
7 – تمہاری ساری رپورٹیں نارمل ہیں ۔
بار بار اس لیڈی ڈاکٹر کے پاس جانے کی ضرورت نہیں ہے۔
8 – میری بہن اور بھابھی کی سالگرہ گزشتہ ماہ ہی ہو گئی ہے. رات کو فون کر کے ان کو وش کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ۔
9 – وائی فائی کا پاس ورڈ تبدیل کر دیا ہے ، جلدی سو جانا …..
10 -زیادہ خوش ہونے اور اترانے کی ضرورت نہیں ہے …
کیونکہ میری ساری سہیلیاں بھی اپنے اپنے میکے جانے والی ہیں ۔
11- شکر، پتی، کافی مانگنے کے بہانے اس کل موہی پڑوسن کے گھر بار بار جانے کی ضرورت نہیں ہے. میں نے ساری چیزیں لا کے رکھ دی ہیں ۔
اور سب سے اہم بات …..
12 – اوور سمارٹ بننے کی کوشش مت کرنا، میں کسی بھی وقت واپس آ سکتی ہوں ۔